Search This Blog

Loading...

Featured Post

Trinity and Divinity of Jesus

The debate over the Trinity started relatively late in Christian history. It was not until the fourth century that many theologia...

Wednesday, November 23, 2016

Front Page

This is a forum for understanding of Christianity, through Bible and teachings of Jesus Christ. It is well known that the Moses and Jesus Christ did not speak English or Greek, the present day English Bibles are translations of translations  by many unknown scribes during past hundred of years, while the original books of Bible are non extant. Analysis of the teachings of Jesus Christ as available in the four Gospels, does not directly support the doctrines of Christianity, which are based upon theology of Paul of Tarsus and later Church fathers. Jesus Christ obeyed & worshiped One God and preached the same. So question arises;

What should be done by a simple person who believes in God, wants to obey Him,  seek eternal bliss and salvation?
Its very simple, if someone is seriously  sick, he/she shall search for a credible doctor and if any stage it is found that he is fake, unreliable, immediately treatment is discontinued, one looks for batter one. God has given us wisdom and intellect to discern truth from falsehood. We spend years in education and learning to earn livelihood and respectable life. We have to make some effort to discover and earn eternal life, blessings and spiritual peace.
Take a bath, wear clean cloths, sit down alone and pray to God: "O, God of the universe, You are the Creator, Cherishes of all, You are Gracious and Merciful, I want to follow the right path which is pleasing to You, please help me, guide me to the Truth. Amen.
  1. Free your mind of all your existing beliefs & ideas.
  2. If you are a Christian, take "Red or Blue lettered Gospels", pen , marker and papers. Start reading Gospels, slowly, gradually, take your time, don't be in hurry.
  3. Underline, highlight, note down the teachings, sayings of Jesus Christ what he physically and openly preached to people and 12 disciples, not in "VISIONS or Dreams". [Thomas Jefferson's Experience]
  4. Discard what is not common in four Gospels. Critically examine it, accept what is clear, obvious your are near to the Truth, discard any belief which is ambiguous, not clearly , openly preached by Jesus Christ.
  5. Look around for people who you find practicing closer to the real teachings of Jesus Christ. Seek their assistance. 
  6. Continue with your quest for Truth till you find it. Keep praying to God for His help. Onus lies with Him.
  7. Keep exploring, keep reading .......... This site will assist in this regards. 

"You will seek Me and find Me when you search for Me with all your heart" (Jeremiah 29:13)

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~


While the Basic concept of Bible remains monotheistic [Deuteronomy;6:4-5, Psalms;14:1, 116:5Job;23:8-9, Exodus; 9:14, 34:6-7, Psalms;, 2Samuel;7:22, Isaiah;46:5,9, Matthew;19:17-19, Mark;12:29-31, Romans;1:25]; some passages are interpreted to support Christian Church doctrines. One message is clear:

"Jesus answered, "The greatest is, 'Hear, Israel, the Lord our God, the Lord is one: you shall love the Lord your God with all your heart, and with all your soul, and with all your mind, and with all your strength.' This is the first commandment. The second is like this, 'You shall love your neighbor as yourself.' There is no other commandment greater than these."[Mark 12:29-31]


The Bible itself and the scholars agree that the present text is not as was originally revealed:
"How do you say, We are wise, and the law of the LORD is with us? Lo, certainly he made it falsely; the pen of the scribes made it a lie."[Jeremiah 8:8]. 
"Woe unto them that decree unrighteous decrees, and that write misfortune which they have prescribed; To turn aside the needy from justice, and to take away the right from the poor of my people, that widows may be their prey, and that they may rob the fatherless!"[Isaiah 10:1-2]


Extracts from 'Preface' to RSV Bible approved by The National Council of the Churches of Christ in the USA reproduced below also confirms the same:
'The King James Version of the New Testament was based upon a Greek text that was marred by mistakes, containing the accumulated errors of fourteen centuries of manuscript copying.'
'Sometimes it is evident that the text has suffered in transmission, but none of the versions provides a satisfactory restoration.'
'Yet the King James Version has grave defects. By the middle of the nineteenth century, the development of Biblical studies and the discovery of many manu­scripts more ancient than those upon which the King James Version was based, made it manifest that these defects are so many and so serious as to call for revision of the English translation.'  
'Sometimes the present translation will be found to render a Hebrew word in a sense quite different from that of the traditional interpretation.'
'Many difficulties and obscurities, of course, remain.'
'We now possess many more ancient manuscripts of the New Testament, and are far better equipped to seek to recover the original wording of the Greek text'

The scholars are continuously trying to improve and to make the Biblical text as closer to the 'visualised original' as possible but the task is  not only arduous but impossible due to non existence of original scripts. Under these circumstances it is the individual responsibility to find out truth as Jesus Christ urged his followers to use the reason and intellect to discern the truth from falsehood:

"He also said to the multitudes, "When you see a cloud rising in the west, you say at once, 'A shower is coming'; and so it happens. And when you see the south wind blowing, you say, 'There will be scorching heat'; and it happens. You hypocrites! You know how to interpret the appearance of earth and sky; but why do you not know how to interpret the present time? "And why do you not judge for yourselves what is right?" [Luke;12:54-56]

It is aimed to facilitate efforts of knowledge seekers to discern the truth from falsehood with the intellectual use of available evidence with in Bible and history. Every one is entitled to his belief but one has to be sure that its based upon the real teachings not derived human work, which may result in everlasting doom & destruction:
“The soul that sins shall die. The son shall not suffer for the iniquity of the father, nor the father suffer for the iniquity of the son; the righteousness of the righteous shall be upon himself, and the wickedness of the wicked shall be upon himself. But if a wicked man turns away from all his sins which he has committed and keeps all my statutes and does what is lawful and right, he shall surely live; he shall not die.”(Ezekiel;18:20-21)
"The fathers shall not be put to death for the children, neither shall the children be put to death for the fathers: every man shall be put to death for his own sin." (Deuteronomy 24:16, 2Kings 14:6)
"In those days they shall say no more, The fathers have eaten a sour grape, and the children's teeth are set on edge. But every one shall die for his own iniquity: every man that eateth the sour grape, his teeth shall be set on edge." (Jeremiah 31:29-30)
"Say ye to the righteous, that it shall be well with him: for they shall eat the fruit of their doings. Woe unto the wicked! it shall be ill with him: for the reward of his hands shall be given him." (Isaiah 3:10-11)
"For the Son of man shall come in the glory of his Father with his angels; and then he shall reward every man according to his works." (Matthew 16:27 )


There may be some other verses with conflicting meanings, in such a situation one has to apply his/her intellect to discern truth from false in the light of saying of Jesus Christ; "And why do you not judge for yourselves what is right?" [Luke;12:56]. Remember;"God is not the author of confusion..." (1 Corinthians 14:33). It is simple and logical that a son can not be punished for the crime of his father or any one else, so any doctrine which deviates from the simple logic and clear Biblical text does not stand up to the criteria.





* * * * * * * * * * * * * * * * * * *
Conclusion

How do you say, We are wise, and the law of the LORD is with us? Lo, certainly he made it falsely; the pen of the scribes made it a lie [Jeremiah 8:8]
Woe unto them that decree unrighteous decrees, and that write misfortune which they have prescribed; To turn aside the needy from justice, and to take away the right from the poor of my people, that widows may be their prey, and that they may rob the fatherless! [Isaiah 10:1-2]
So question arises that:
What should be done by a simple person who believes in God, wants to obey Him,  seek eternal bliss and salvation?
Its very simple, if someone is seriously  sick, he/she shall search for a credible doctor and if any stage it is found that he is fake, unreliable, immediately treatment is discontinued, one looks for batter one. God has given us wisdom and intellect to discern truth from falsehood. We spend years in education and learning to earn livelihood and respectable life. We have to make some effort to discover and earn eternal life, blessings and spiritual peace.
Take a bath, wear clean cloths, sit down alone and pray to God: "O, God of the universe, You are the Creator, Cherishes of all, You are Gracious and Merciful, I want to follow the right path which is pleasing to You, please help me, guide me to the Truth. Amen.
  1. Free your mind of all your existing beliefs & ideas.
  2. If you are a Christian, take "Red or Blue lettered Gospels", pen , marker and papers. Start reading Gospels, slowly, gradually, take your time, don't be in hurry.
  3. Underline, highlight, note down the teachings, sayings of Jesus Christ what he physically and openly preached to people and 12 disciples, not in "VISIONS or Dreams". [Thomas Jefferson's Experience]
  4. Discard what is not common in four Gospels. Critically examine it, accept what is clear, obvious your are near to the Truth, discard any belief which is ambiguous, not clearly , openly preached by Jesus Christ.
  5. Look around for people who you find practicing closer to the real teachings of Jesus Christ. Seek their assistance. 
  6. Continue with your quest for Truth till you find it. Keep praying to God for His help. Onus lies with Him.
  7. Keep exploring, keep reading .......... This site will assist in this regards. 
 ~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Why Monotheists be interested in Christianity and Bible? 

The three monotheistic religions, Jews, Christians & Muslims are linked  through the common ancestor and spiritual father of these great faiths, Abraham, the great monotheist. Muslims, also believe in the Biblical prophets and revelations to them from God hence closer to Jews and Christians. While Jews don't believe in Jesus Christ, the Muslims revere Jesus Christ as a great prophet and messenger of God. While there are many differences, the main difference is the Christian doctrine of Trinity which according to many Biblical scholars is extra biblical.
However the least they can do is to to believe in Just One God, [not Trinity] the concept, always followed by Christians in varying numbers during last 2000 years, the number growing now. This may save them form idolatry, polytheism, the great unforgivable sin according to Bible (Exodus 34:14 ; Isaiah 2:8,
1Sa 15:23, Mt 6:24; Lu 16:13; Col 3:5; Eph 5:5, Acts 10:25 Acts 10:26, Revelation 22:8, 22:9) and Quran. Even seven laws of Noah which according to Jews if followed by gentiles are enough for their salvation, they include this great sin of worshipping any one beside God.(see Quran;4:116)
This site may help to follow the true teachings of Jesus Christ centred on obedience and worship of God. 
Explore more  about CHRIST & CHRISTIANITY: http://flip.it/0kFbY  
View my Flipboard Magazine.

~~~~~~~~~~~~~~~
Humanity, ReligionCultureSciencePeace
 A Project of 
Peace Forum Network
BooksArticles, BlogsMagazines,  VideosSocial Media
Visited by Millions 
http://JustOneGod.blogspot.com
~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~

Monday, November 21, 2016

توحید اور بائبل :Monotheism in Bible

Image result for monotheism in bible

بائبل میں توحید پر زوردیا گیا:
یہ سب تجھی کو دکھایا گیا تا کہ تُو ناجے کہ خداوند ہی خدا ہے اور اُس کے سواہ کوئی نہیں۔ استثناء باب ۴ آیت ۳۵

پس آج کے دن جان اور اپنے دل میں غور کر کہ خداوند وہی خدا ہے جو اُوپر آسمان میں ہے اور نیچے زمین میں ہے اور کہ اُس کے سواہ کوئی نہیں۔ استثناء باب ۴ آیت ۳۹

سو تُو اے خداوند خدا بزرگ ہے اور اسلئے کہ کوئی تیری مانند نہیں اور تیرے سوا جہاں تک ہم نے اپنے کانوں سے سنا ہے کوئی خدا نہیں۔ سموایل باب ۷ آیت ۲۲

میں ہی خداوند ہوں اور کوئی نہیں۔میرے سوا کوئی خدا نہیں۔ میں نے تیری کمر باندھی اگرچہ تُو نے مجھے نہ پہچانا۔ یسیعا باب ۴۵ آیت ۵

اسی طرح عہد نامہ جدید میں لکھا ہے

یسوع نے جواب دیا کہ اول یہ ہے اے اسرائیل سن ! خداوند ہمارا خدا ایک ہی خداوند ہے۔ اور تُو خداوند اپنے خدا سے اپنے سارے دل اور اپنی ساری جان اور اپنی ساری طاقت سے محبت رکھ۔ مرقس باب ۱۲ آیت ۲۹ تا ۳۰

تم جو ایک دوسرے سے عزت چاہتے ہو وہ عزت جو خدائے واحد کی طرف سے ہوتی ہے نہیں چاہتے۔ کیونکر ایمان لا سکتے ہو؟ یوحنا باب ۵ آیت ۴۴

چنانچہ میں نے سیر کرتے اور تمہارے معبودوں پر غور کرتے وقت ایک ایسی قربان گاہ بھی پائی جس پر لکھاتھا کہ نامعلوم خدا کے لئے۔پس جس کو تم بغیر معلوم کئےپوجتے ہو میں تم کو اُسی کی خبر دیتا ہوں جس خدا نےدنیا اور اس کی ساری چیزوں کو پیدا کیا وہ آسمان اور زمین کا مالک ہو کر ہاتھ کے بنائے ہوئے مندروں میں نہیں رہتا۔ نہ کسی چیز کا محتاج ہو کر آدمیوں کے ہاتھ سے خدمت لیتا ہے کیونکہ وہ تو خود سب کو زندگی اور سانس اور سب کچھ دیتا ہے۔ اور اُس نے ایک ہی اصل سے آدمیوں کی ہر ایک قوم تمام روئے زمین پر رہنے کے لئے پیدا کی اور اُن کی میعادوں اور سکونت کی حدیں مقرر کیں تا کہ خدا کو ڈھونڈیں شاید کہ ٹٹول کر اُسے پائیں اور ہر چند کہ وہ ہم میں سے کسی سے دور نہیں۔ اعمال باب ۱۷ آیت ۲۳ تا ۲۷

لفظ ابن اللہ کی وسعت

تب تُو فرعون کو یوں کہیو کہ خداوند نے یوں فرمایا ہے کہ اسرائیل میرا بیٹا بلکہ میرا پلوٹھا ہے۔خروج باب ۴ آیت ۱۱

حضرت داود کے بارے میں آیا ہے کہ

میں حکم کو آشکار کروں گا کہ خداوند نے میرے حق میں فرمایا ہے کہ تُو میرا بیٹا ہے میں آج کے دن تیرا باپ ہوا۔ زبور باب ۲ آیت ۷

میں اُسے اپنا پلوٹھا بھی ٹھہراوں گا اور زمین کے بادشاہوں سے بالا۔ زبور ۸۹ آیت ۲۷

دیکھ تجھ سے ایک بیٹا پیدا ہوگا وہ صاحب صلح ہو گا اور میں اسے اس کی چاروں طرف کے سارے دشمنوں سے صلح دوں گاکہ سلیمان اس کا نام ہو گا اور امن و آرام میں اُس کے دنوں میں اسرائیل کو بخشوں گا۔ وہی میرے نام کے لئے ایک گھر بنائے گا وہ میرابیٹا ہو گا اور میں اُس کا باپ ہوں گا۔۱ تواریخ باب ۲۲ آیت ۹ تا ۱۰

مبارک ہیں وہ جو صلح کراتے ہیں کیونکہ وہ خدا کے بیٹے کہلائیں گے۔ متی باب ۵ آیت ۹

وہ نہیں جانتے اور وہ سمجھیں گے نہیں وہ اندھیرے میں چلتے ہیں۔زمین کی ساری بنیادیں جنبش کرتی ہیں۔ میں نے تو کہا تم الہہ ہو تم سب حق تعالی کے فرزند ہو۔ زبور باب ۸۲ آیت ۵ تا ۶

اسلئے جتنے خدا کی ہدایت سے چلتے ہیں وہی خدا کے بیٹے ہیں۔ رومیوں باب ۸ آیت ۱۴

یسوع نے اُس سے کہا مجھے نہ چھو کیونکہ میں اب تک باپ کے پاس اوپر نہیں گیا لیکن میرے بھائیوں کے پاس جا کر اُن سے کہہ کہ میں اپنے باپ اور تمہارے باپ اور اپنے خدا اور تمہارے خدا کے پاس اُوپر جاتا ہوں۔ یوحنا باب ۲۰ آیت ۱۷

تم میرے گواہ ہو۔ خداوند فرماتا ہے اور میرا بندہ بھی جسے میں نے برگزیدہ کیا تا کہ تم جانو اور مجھ پر ایمان لاو اور سمجھو کہ میں وہی ہوں مجھ سے آگے کوئی خدا نہ بنا اور میرے بعد بھی کوئی نہ ہوگا۔ یسعیاہ باب ۴۳ آیت ۱۰

مسیح نے کبھی خود کو خدا کا حقیقی بیٹا نہیں کہا

یہودیوں نے اُسے سنگسار کرنے کے لئے پھر پتھراُٹھائے۔ یسوع نے انہیں جواب دیا کہ میں نے تم کو باپ کی طرف سے بہتیرے اچھے کام دکھائے ہیں اُن میں سے کس کام کے سبب مجھے سنگسار کرتے ہو۔ یہودیوں نے اُسے جواب دیاکہ اچھے کام کے سبب نہیں بلکہ کفر کے سبب تجھے سنگسار کرتے ہیں اور اس لیے کہ تو آدمی ہو کر اپنے آپ کو خدا بناتا ہے۔یسوع نے انہیں جواب دیا کیا تمہاری شریعت میں یہ نہیں لکھا کہ میں نے کہا تم خدا ہو۔ جب کہ اُس نے اُنہیں خدا کہا جن کے پاس خدا کا کلام آیا اور کتابِ مقدس کا باطل ہونا ممکن نہیں۔ آیا تم اُس شخص سے جسے باپ نے مقدس کر کے دنیا میں بھیجا کہتے ہو کہ تو کفر بکتا ہے اس لیے کہ میں نہ کہا میں خدا کا بیٹا ہوں۔ یوحنا باب ۱۰ آیت ۳۱ تا ۳۶

اگر حضرت مسیح کا دعوی واقعی خدائی کا ہوتا تو جب آپ پر یہ الزام لگایا گیا کہ تم انسان ہو کر اپنے آپ کو خدا کہتے ہو تو اسکا جواب یوں دیتے کہ میں خدا ہی ہوں اور تمہاری پیشگوئیوں میں خدا کا آنا لکھا ہے مگر بجائے اس کے آپ یہ جواب دیتے ہیں کہ تمہارے بزرگوں کو بھی خداکے کلام میں خدا کہا گیا ہے اگر ان کا خدا کہلانا کفر نہیں تو میرا خدا کا بیٹا کہلانا کیوں کفر ہو گیا۔ باالفاظ دیگر جن معنوں میں وہ خدا کہلائے انہی معنوں میں میں خدا کا بیٹا ہوں۔نہ وہ حقیقت میں خدا تھے نہ میں حقیقت میں خدا کا بیٹا ہوں مگر مجازی طور پر ان کو بھی خدا کہا گیا ہے اور مجازی طور پر میں بھی خدا کا بیٹا ہوں۔

مسیح کا انکار دراصل خداوند کا انکار تھا، اس سے دعوی خدائی لازم نہیں آتا

جو کوئی میرے نام پر چھوٹے بچے کو قبول کرتا ہے تو گویا کہ اس نے مجھے ہی قبول کیا ہے اور اگر کوئی مجھے قبول کرتا ہے تو گویا وہ میرے بھیجنے والے خدا کو قبول کرتا ہے۔لوقا ۹ آیت ۴۸

جو تمہیں نہیں مانتا گویا وہ مجھے نہیں مانتا اور جو مجھے نہیں مانتا گویا وہ خدا کو نہیں مانتا جس نے مجھے بھیجا ہے۔ لوقا۱۰ آیت ۱۶



جبکہ زبور میں الٰہ کے بارے میں یوں درج ہے

وہ نہیں جانتے اور وہ سمجھیں گے نہیں وہ اندھیرے میں چلتے ہیں۔زمین کی ساری بنیادیں جنبش کرتی ہیں۔ میں نے تم سے کہا تم الٰہ ہو۔ اور تم سب حق تعلٰی کے فرزند ہو۔ زبور باب ۸۲ آیت ۵ تا ۶

مسیح کے شاگرد بھی مسیح کو خدا کا حقیقی بیٹا تسلیم نہیں کرتے تھے

جب وہ تنہائی میں دعا مانگ رہا تھا اور شاگرد اس کے پاس تھے تو ایسا ہوا کہ اُس نے اُن سے پوچھا کہ لوگ مجھے کیا کہتے ہیں انہوں نے کہا یوحنا بتسمہ دینے والا اور بعض ایلیا کہتے ہیں اور بعض یہ کہ قدیم نبیوں میں سے کوئی جی اُٹھا ہے۔ اس نے اُن سے کہا لیکن تم مجھے کیا کہتے ہو؟ پطرس نے جواب میں کہا خدا کا مسیح۔ اُس نے اُن کو تاکید کر کے حکم دیا کہ یہ کسی سے نہ کہنا اور کہا کہ ضرور ہے کہ ابن آدم بہت دکھ اُٹھائے ۔ لوقا باب ۹ آیت ۱۸ تا ۲۲

توریت نے غیرمعبودوں کی پرستش سے منع کیا

تم زمین کی کسی چیز کو یا آسمان کی کسی چیز کو دیکھو تو اس کو خدا مت بناو۔ جیسا کہ خروج ۲۰ باب ۳ میں یہ الفاظ ہیں کہ تواپنے لئے کوئی مورت یا کسی چیز کی صورت جو آسمان پر یا نیچے زمین پر یا پانی میں زمین کے نیچے ہے خدا مت بنا۔

اور لکھا ہے کہ اگر تمہارے درمیان کوئی نبی یا خواب دکھانے والا ظاہر ہو اور تمہیں نشان یا کوئی معجزہ دکھلاوے اور اس نشان یا معجزہ کے مطابق جو اس نے تمہیں دکھایا ہے بات واقعہ ہواور تمہیں کہے کہ آو ہم غیر معبودوں کی جنہیں تم نے نہیں جانا پیروی کریں تو ہر گز اس نبی یا خواب دیکھنے والے کی بات پر کان مت دھریو۔

مسیح کا اپنا قول ہے وہ فرماتے ہیں سب حکموں میں اول یہ ہے کہ اے اسرائیل سن وہ خداوند جو ہمارا خدا ہے ایک ہی خدا ہے۔ پھر فرماتے ہیں حیات ابدی یہ ہے کہ وے تجھ کو اکیلا سچا خدا اور یسوع مسیح کو جسے تم نے بھیجا ہے جانیں۔ یوحنا ۱۷/3

اور “ بھیجا “ کا لفظ توریت کے کئی مقام میں انہیں معنوں پر بولا گیا ہے کہ جب خدا تعالی کسی اپنے بندہ کو مامور کر کے اور اپنا نبی ٹھہرا کر بھیجتا ہے تو اس وقت کہا جاتا ہے کہ وہ بندہ بھیجا گیا ہے۔

اے اسرائیل سن ! خداوند ہمارا خدا ایک ہی خداوند ہے اور تو خداوند اپنے خدا سے اپنے سارے دل اور اپنی ساری زبان اور اپنی پیاری عقل اور اپنی ساری طاقت سے محبت رکھ۔ مرقس ۲۹:۱۲ و متی ۳۶:۲۲

اور ہمیشہ کی زندگی یہ ہے کہ وہ تجھ خدائے واحد اور برحق کو اور یسوع مسیح کو جسے تو نے بھیجا ہے جانیں۔ یوحنا ۳:۱۷

مسیح کا حسب نامہ

جب یسوع خود تعلیم دینے لگا تو برس تیس ایک کا تھا اور (جیسا کہ سمجھا جاتاتھا) یوسف کا بیٹا تھا اور وہ عیلی کا۔۔۔۔۔۔۔۔ اور وہ انوش کا اور وہ شیت کا اور وہ آدم کا اور وہ خدا کا تھا۔ لوقا باب ۳ آیت ۲۳ تا ۳۸

یسوع مسیح ابن داود ابن ابراہیم کا نسب نامہ۔ متی باب ۱ آیت ۱

اور یعقوب سے یوسف پیدا ہوا یہ اُس مریم کا شوہر تھا جس سے یسوع پیدا ہوا جو مسیح کہلاتا ہے۔ متی باب ۱ آیت ۱۶

مسیح کے زمانہ میں سب جانتے تھے کہ یسوع یوسف بڑھئی کے بیٹے ہیں۔ خود یسوع کے رشتہ دار اور کنبہ کے لوگ علی الاعلان کہتے پھرتے تھے جسکی تردید نہ کبھی یسوع نے کی نہ ان کی ماں نے

کیا یہ بڑھئی کا بیٹا نہیں؟ اسکی ماں کا نام مریمؑ اور اس کے بھائی یعقوب اور یوسف اور شمعون اور یہوداہ نہیں؟ اور کیا اس کی سب بہنیں ہمارے ہاں نہیں؟ متی باب ۱۳ آیت ۵۵ تا ۵۶

پس یہودی اس پر بڑبڑانے لگے۔ اس لئے کہ اس نے کہا تھا کہ جو روٹی آسمان سے اُتری ہے وہ میں ہوں۔ اور انہوں نے کہا کیا یہ یوسف کا بیٹا یسوع نہیں جس کے باپ اور ماں کو ہم جانتے ہیں۔اب کیونکر کہتا ہےکہ میں آسمان سے اترا ہوں۔ یوحنا باب ۶ آیت ۴۱ تا ۴۲

اور اس کی ماں نے اس سے کہا بیٹا، تو نے کیوں ہم سے ایسا کیا؟ دیکھ تیرا باپ اور میں کڑھتے ہوئے تجھے ڈھونڈتے تھے۔ یوحنا باب ۲ آیت ۴۸

متی نے بھی جو نسب نامہ لکھا ہے اس کا عنوان قائم کیا ہے “ یسوع مسیح ابن داود ابن ابراہیم کا نسب نامہ” چنانچہ حضرت ابراہیم سے نسب نامہ شروع کر کے یوسف پر ختم کیا۔اور پھر لکھا ہے کہ یہ اس مریم کا شوہر تھا جس سے یسوع پیدا ہوا۔ یا للعجب! اگر یوسف کو یسوع مسیح کی ولادت میں دخل نہیں اور وہ صرف ان کی والدہ کا شوہر ہے اور اسے سے مسیح پیدا نہیں ہوئے تو ابراہیم سے نسب نامہ مریم تک لانا چاہیے تھا نہ کہ یوسف تک۔

مرقس اور یوحنا کی انجیل میں ولادتِ مسیح

لوقا اور متی کی انجیلوں میں مسیح کی ولادت کا ذکر ہے مگر لطف یہ کہ دونوں کے بیانات آپس میں ملتے نہیں اور ان میں صریح اختلاف ہے۔

مرقس اور یوحنا میں مسیح کی بن باپ ولادت کا کوئی ذکر نہیں۔ یوحنا کی عظمت مسلم ہے اور مسیح سے محبت میں ان کا شغف سب پر واضح ہے مگر وہ قطعاً کسی کنواری کے حاملہ ہونے کا ذکر نہیں کرتے بلکہ وہ صاف لفظوں میں لکھ گئے ہیں کہ

 فلپس نے تین اپل سے مل کر اسے کہا جس کا ذکر موسیٰ نے توریت اور نبیوں نے کیا ہے وہ ہم کو مل گیا۔ وہ یوسف کا بیٹا یسوع ناصری ہے۔ یوحنا باب ۱ آیت ۴۵

اور یوحنا کا ہی وہ حوالہ جو اوپر درج ہے

کیا یہ یوسف کا بیٹا یسوع نہیں جس کے باپ اور ماں کو ہم جانتے ہیں۔ یوحنا باب ۶ آیت ۴۲

متی کی انجیل اور کنواری حاملہ

یہ عبارت متی میں لکھی ہوئی ہے کہ “ یہ سب کچھ اسلئے ہوا کہ خداوند نے نبی کی معرفت کہا تھا وہ پورا ہو کہ دیکھو ایک کنواری حاملہ ہو گی اور بیٹا جنے گی اور اس کا نام عمانوائیل رکھیں گے”۔جس نبی کی پیشگوئی کا یہاں ذکر کیا گیا ہے وہ یسعیاہ نبی ہے جس کے باب ۷ آیت ۱۴ میں یہ پیشگوئی مذکور ہے۔ مگر یسیعاہ نبی کی کتاب کی تفسیر میں علامہ ڈیوڈسن تحریر فرماتے ہیں کہ دراصل یسیعاہ نبی نے کنواری کا لفظ نہیں فرمایا تھا بلکہ “علمہ” کا لفظ ارشاد فرمایا جس کے معنی “بالغہ عورت”کے ہیں۔لیکن عہد عتیق کا ترجمہ یونانی زبان میں ہوا تو یونانی ترجمہ کرتے وقت “علمہ” کا ترجمہ “ پارتھی یوس” بمعنے “کنواری” کر دیاگیا۔تو ضروری ہواکہ اس پیشگوئی کو مسیح پر چسپاں کرنے کے لئے ان کی ولادت کو بغیر باپ کے قرار دیا جائےتا کہ یہ پیشگوئی بھی اپنے ظاہری الفاظ میں پوری ہو جائے اور مسیح کے خدائی اوتار ہونے کے لئے بھی ایک رستہ نکل آئے اور ظاہر ہے کہ یہ اس وقت ہوا جب “علمہ” کا ترجمہ پارتھی یوس یعنی باکرہ یونانی زبان میں ہو چکا تھا۔ گویا بائبل کو یونانی زبان میں ترجمہ کرتے وقت اصل پیشگوئی میں تحریف کر کے بالغہ کا باکرہ کر لیا گیا۔ اور مسیح کی ولادت کو ایک کنواری کے پیٹ سے جتلا کر ایک طرف تو اس پیشگوئی کا مصداق مسیح کو ٹھہرایا گیا تو دوسری طرف یونان کے آفتاب پرستوں کا گھر پورا کر دیا گیا جو اپنے ہاں خدا کے اوتار کو ہمیشہ سے کنواری کے پیٹ سے مانتے چلے آئے ہیں۔
https://esaiyat.wordpress.com/

Read: 
~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~ ~  ~ ~ ~  ~
Humanity, Religion, Culture, Science, Peace
A Project of Peace Forum Network: Overall 3 Million visits/hits

Friday, April 22, 2016

کیا مسیحی اور مسلمان کا خدا ایک ہے؟ msehi The God of Muslims and Christians- Catechism the Catholic Church for Salvation para 841 includes Muslims: کیتھولک چرچ کی مسیحی مذہبی تعلیم، پیرا نمبر841 کے مطابق نجات کے منصوبہ میں مسلمان شامل ہیں

Catechism of the Catholic Church for Salvation para 841 includes Muslims
کیتھولک چرچ کی مسیحی مذہبی تعلیم، پیرا نمبر841  کے  مطابق نجات کے منصوبہ میں مسلمان شامل
ہیں

PART ONE , THE PROFESSION OF FAITH,  SECTION TWO: “THE PROFESSION OF THE CHRISTIAN FAITH”  CHAPTER THREE, PARAGRAPH 841:
841 The Church's relationship with the Muslims. "The plan of salvation also includes those who acknowledge the Creator, in the first place amongst whom are the Muslims; these profess to hold the faith of Abraham, and together with us they adore the one, merciful God, mankind's judge on the last day."330  [330 LG 16; cf. NA 3.]
شاید بہت کم لوگوں کو علم ہے کہ مسیحیت کے سب سے اعلی اور قدیم کیتھولک چرچ، ویٹیکن روم کی ایمان کی تعلیمات کے مطابق مسلمان بھی نجات کے منصوبہ میں شامل ہیں. Catechism of the Catholic Church پیرا نمبر841 اور اس کا ترجمہ پیش ہے:
کیتھولک چرچ کی مسیحی مذہبی تعلیم:
مسلمانوں کے ساتھ چرچ کے تعلقات - نجات کے منصوبہ میں وہ سب لوگ  بھی شامل ہیں  جو خالق کو تسلیم کرتے ہیں، ان میں سب سے پہلے مسلمان آتے ہیں :جو ابرہام پرایمان کا اقرار کر تے ہیں، اور ہمارے طرح وہ بھی ایک مہربان خدا کی بَڑی عقيدَت کے ساتھ پَرَستِش کرتے ہیں جو  آخرت کے دن بنی نوع انسان کا جج ہے.(کیتھولک چرچ کی مسیحی مذہبی تعلیم، پیرا،841 بحوالہ لومین گنٹیم 16 ، نومبر21، 1964)
رومن کیتھولک بائبل کے خدا کے طور پر اللہ کو تسلیم کرتا ہے. 1985 میں، پوپ جان پال II مسلم نوجوانوں کے ایک پرجوش ہجوم کو بتایا کہ:
"عیسائی اور مسلمان، ہم مومنوں کے طور پر عام میں بہت سی چیزیں ہیں اور انسان کے طور پر .... ہم ایک ہی خدا، ایک خدا، زندہ خدا میں یقین رکھتے ہیں ...."

The Church’s relationship with Muslims. The plan of salvation also includes those who acknowledge the Creator, in the first place among whom are the Muslims; these profess to hold the faith of Abraham, and together with us they adore the one, merciful God, mankind's judge on the last day (Catechism of the Catholic Church, paragraph 841, quoting Lumen Gentium 16, November 21, 1964).

Pope John Paul II repeated this statement even more clearly when he said to Muslim youth: “We believe in the same God, the one and only God, the living God…”
Pope Declares that Allah and Jehovah are the names of same God.
Image result for god of muslims and christians
In his weekly general audience in late May of 1999, Pope John Paul II addressed Muslims in a series discussing "inter-religious dialog." He quotes from the 1994 Catechism of the Catholic Church n. 841 which states, "... together with us they (Muslims) adore the one, merciful, God." The Pope and many other religious leaders today, who are being wooed into the ecumenical movement, are accepting the idea that the God of the Koran and the God of the Bible are one and the same. [Issue Date: January/February 2000]
  • “ELAH” is the name for God, used about 70 times in the Old Testament. 
  • It is very similar to Arabic “Allah” or ‘Eelah’. إِلٰهَ  Elahh [hla]‘ (Aramaic; el-aw’): corresponding to God. In Hebrew [hwla] ‘elowahh el-o’-ah; probably prolonged (emphat.) from [la]‘el ale; a deity or the Deity:–God, god. Again, when combined with other words, we see different attributes of God. Some examples: Elah Yerush’lem – God of Jerusalem: (Ezra;7:19), Elah Yisrael – God of Israel: (Ezra;5:1), Elah Sh’maya – God of Heaven:(Ezra 7:23). Elah Sh’maya V’Arah – God of Heaven and Earth: (Ezra;5:11). 
  • NT quotes Jesus Christ using Aramaic ELI (God):-
    46ܘܠܐܦܝ ܬܫܥ ܫܥܝܢ ܩܥܐ ܝܫܘܥ ܒܩܠܐ ܪܡܐ ܘܐܡܪ ܐܝܠ ܐܝܠ ܠܡܢܐ ܫܒܩܬܢܝ ܀ 

    "About the ninth hour Jesus cried out with a loud voice, saying, "ELI, ELI, LAMA SABACHTHANI?" that is, "MY GOD, MY GOD, WHY HAVE YOU FORSAKEN ME?"[Matthew 27:46, Mark 15:34, Psalm 22:1]
    Greek:
    περὶ δὲ τὴν ἐνάτην ὥραν ἀνεβόησεν ὁ Ἰησοῦς φωνῇ μεγάλῃ λέγων· Ἠλὶ ἠλὶ λεμὰ σαβαχθάνι; τοῦτ’ ἔστιν· Θεέ μου θεέ μου, ἱνατί με ἐγκατέλιπες;
    Arabic:
    ونحو الساعة التاسعة صرخ يسوع بصوت عظيم قائلا ايلي ايلي لما شبقتني اي الهي الهي لماذا تركتني.
    Hebrew Text Psalm 22:1
    לַ֭מְנַצֵּחַ עַל־אַיֶּ֥לֶת הַשַּׁ֗חַר מִזְמֹ֥ור לְדָוִֽד׃ אֵלִ֣י אֵ֭לִי לָמָ֣ה עֲזַבְתָּ֑נִי רָחֹ֥וק מִֽ֝ישׁוּעָתִ֗י דִּבְרֵ֥י שַׁאֲגָתִֽי׃

    ’ê-lî אֵלִ֣י My God  [http://biblehub.com/text/psalms/22-1.htm ]
    The Islamic way to profess faith is to recite, declare; Kalimah Tayyibah kalimat aṭ-ṭaiyibah (Word of Purity), shahada. 
    لَا إِلٰهَ إِلَّا الله مُحَمَّدٌ رَسُولُ الله
    'lā ilāha illā -llāh, muḥammadur rasūlu -llāh
    There is no god (ilaha) but Allah, [and] Muhammad is the messenger of Allah.
    The Arab Christians also use 'Allah' as name of God in the Arabic Bible. 

~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~~
The True believers and worshippers of One God, like Abraham (pbuh) have good news in Quran & Bible:

“Abraham "believed God, and it was reckoned to him as righteousness." So you see that it is men of faith who are the sons of Abraham.”(Galatians;3:6-7).
صحیفہ بھی یہی سب کچھ ابرا ہیم کے بارے میں کہتا ہے۔“ابرا ہیم نے خدا پر ایمان لا یا اور اس کے معاوضہ میں خدا نے اسے قبول کیا اور وہ خدا کے نزدیک راستباز ہوا۔” 7 تمہیں معلوم ہونا چاہئے کہا ابراہیم کے سچے لڑ کے وہی لوگ ہیں جو ایمان وا لے ہیں۔ ( گلتیوں 3:6-7)
“If  you were  Abraham's children, you  would do  what Abraham did.” (Jesus,  John; 8:39).
یہودیوں نے کہا ، “ہما را باپ ابراہیم ہے۔” یسوع نے کہا ، “اگر تم حقیقت میں ابراہیم کے بیٹے ہو تو وہی کروگے جو ابرا ہیم نے کیا۔ (یوحنا 8:39)
“Abraham was neither a "Jew" nor a "Christian", but was one who turned away from all that is false, having surrendered himself unto God; and he was not of those who ascribe divinity to aught beside Him.”(Qur’an;3:67)

ابراہیم نہ یہودی تھے اور نہ مسیحی ( نصرانی) بلکہ وہ تو نرے کھرے خالص خدا کے فرمانبردار بندے (مسلمان) تھے اور وہ مشرکوں میں سے نہیں تھے۔ (3:67 قران)

“Mankind were one community, and Allah sent (unto them) Prophets as bearers of good tidings and as warners, and revealed therewith the Scripture with the truth that it might judge between mankind concerning that wherein they differed. And only those unto whom (the Scripture) was given differed concerning it, after clear proofs had come unto them, through hatred one of another. And Allah by His will guided those who believe unto the truth of that concerning which they differed. Allah guides whom He will unto a Straight path.”(Qura’n;2:213).

دراصل لوگ ایک ہی گروه تھے اللہ تعالیٰ نے نبیوں کو خوشخبریاں دینے اور ڈرانے واﻻ بنا کر بھیجا اور ان کے ساتھ سچی کتابیں نازل فرمائیں، تاکہ لوگوں کے ہر اختلافی امر کا فیصلہ ہوجائے۔ اور صرف ان ہی لوگوں نے جنھیں کتاب دی گئی تھی، اپنے پاس دﻻئل آچکنے کے بعد آپس کے بغض وعناد کی وجہ سے اس میں اختلاف کیا اس لئے اللہ پاک نے ایمان والوں کی اس اختلاف میں بھی حق کی طرف اپنی مشیئت سے رہبری کی اور اللہ جس کو چاہے سیدھی راه کی طرف رہبری کرتا ہے (2:213 قران)

“In fact, your religion is one religion, and I am your only Lord: so fear Me Alone. Yet people have divided themselves into factions and each faction rejoices in its own doctrines”(Qur’an;23:52-53).

یقیناً تمہارا یہ دین ایک ہی دین ہے اور میں ہی تم سب کا رب ہوں، پس تم مجھ سے ڈرتے رہو  پھر انہوں نے خود (ہی) اپنے امر (دین) کے آپس میں ٹکڑے ٹکڑے کر لیئے، ہر گروه جو کچھ اس کے پاس ہے اسی پر اترا رہا ہے (23:52-53  قران)


إِنَّ الَّذِينَ آمَنُوا وَالَّذِينَ هَادُوا وَالنَّصَارَىٰ وَالصَّابِئِينَ مَنْ آمَنَ بِاللَّـهِ وَالْيَوْمِ الْآخِرِ وَعَمِلَ صَالِحًا فَلَهُمْ أَجْرُهُمْ عِندَ رَبِّهِمْ وَلَا خَوْفٌ عَلَيْهِمْ وَلَا هُمْ يَحْزَنُونَ ﴿البقرة  ٦٢  قران
“The believers (Muslims), the Jews, the Christians, and the Sabaeans (monotheist followers of John the Baptist), all those who believe in God and the Last Day and do good deeds, will be rewarded by their Lord; they shall have no fear, nor shall they grieve.” (Quran;2:62, 5:69)
مسلمان ہوں، یہودی ہوں، نصاریٰ ہوں یا صابی ہوں، جو کوئی بھی اللہ تعالیٰ پر اور قیامت کے دن پر ایمان ﻻئے اور نیک عمل کرے ان کے اجر ان کے رب کے پاس ہیں اور ان پر نہ تو کوئی خوف ہے اور نہ اداسی (  2:262, 5:59 قران)
(God knows the best)

مزید پڑھیں Read More


www.youtube.com/watch?v=Izi3DfGOQqo

It is argued that "Allah" is just the word for "God" in Arabic, which ..... During the olden times, people ...
Read full article: 
God has been addressed with different names in Bible, the most prominent one are mentioned here ..... keep reading>> http://justonegod.blogspot.com/2015/01/the-god-of-muslims-and-christians-is.html

This post sharing short link:
The God of Muslims and Christians- Catechism of the Catholic Church for Salvation para 841 includes Muslims: >>> http://goo.gl/JHn41S

کیتھولک چرچ کی مسیحی مذہبی تعلیم، پیرا نمبر 841  کے  مطابق نجات کے منصوبہ میں مسلمان شامل ہیں >>> http://goo.gl/JHn41S
Related:
Free-eBooks: http://goo.gl/2xpiv
Peace-Forum Video Channel: http://goo.gl/GLh75